Announcement!

Announcement! Welcome to IbneZia.com. This blog is not being updated frequently. Presently, I am focusing on freelance projects, like: translation, content-writing, editing and proofreading. See my Portfolio page for my work and contact details. Thank you. Sincerely, Ammar Zia

Thursday, 12 May 2016

Senior


’’جناب، آپ کو ایسی بات نہیں کرنی چاہیے تھی۔‘‘
’’او بھائی، خیال سے، ’وہ‘ سینئر ہیں۔‘‘
’’سر، آپ نے فلاں فلاں الزام لگایا، آپ کے پاس کوئی ثبوت ہے؟‘‘
’’ارے، ’وہ‘ سینئر ہیں۔‘‘
’’ویسے کیا کمی تھی کہ آپ بھی ایسی حرکتوں پر اتر آئے؟‘‘
’’سب باتیں ایک طرف، لیکن ’وہ‘ سینئر ہیں۔ کم از کم اسی بات کا خیال کرلو۔‘‘

ایسے سینئروں اور اُن سینئروں کی بتیوں سے ہمیں روزمرہ زندگی میں واسطہ پڑتا ہی رہتا ہے۔ سینئر تو خیر سینئر ہوتے ہیں، لیکن سینئروں کی بتیاں وہ ہوتی ہیں جو خود سینئر نہیں ہوتیں لیکن اُن میں سینئر بننے کی حسرت ہوتی ہے، لہٰذا وہ سینئروں کی سنیارٹی کی بتی بناکر اُس سے استفادہ کرتی ہیں۔
ہر شعبے کی طرح بلاگنگ میں بھی سینئر ہونے کے بے شمار فوائد ہیں۔ لیکن فوائد گنوانے سے کوئی حاصل نہیں کہ سبھی ان سے واقف ہیں۔ اصل راز یہ ہے کہ سینئر بلاگر کیسے بنا جائے۔ ہم تو الحمد للہ دس سال کی بلاگنگ کے بعد بھی سینئر نہیں بن سکے، لیکن ہاں ان دس سالوں میں بہت سوں کو سینئر بنتے دیکھا۔ تو تجربے اور مشاہدے کی بنیاد پر کچھ عرض کرتے ہیں۔ مشورہ اگرچہ مفت ہے لیکن اس کے نتائج کی ذمہ داری ہم پر ہرگز نہ ہوگی۔
1۔ تاریخ سے رشتہ جوڑیں۔
سب کو بتائیں کہ آپ بہت قدیم بلاگر ہیں۔ ڈرنے کی کوئی بات نہیں، اُردو بلاگنگ کے ابتدائی پلیٹ فارمز اب نابود ہوچکے ہیں، ان کی کوئی تاریخ موجود نہیں۔ کسی بھی ایسے بلاگنگ پلیٹ فارم پر بلاگ بنانے کا دعویٰ کرلیں کہ 1857ء میں فلاں فلاں نام سے بلاگ بنایا تھا۔
2۔ ہر بات میں ٹانگ اڑائیں۔
جہاں اُردو بلاگنگ سے متعلق کوئی بات ہو، پہنچ جائیں اور تبصرہ کرنا اپنا فرضِ عین سمجھیں۔ جن لوگوں کا اُردو بلاگنگ سے کوئی تعلق نہ ہو اور وہ کبھی اُردو بلاگنگ کی بات کر بیٹھیں تو وہاں سب سے پہلے پہنچنے کی کوشش کریں اور خود کو ایسے ظاہر کریں کہ اُردو بلاگنگ کے کرتا دھرتا آپ ہی ہیں، اور آپ ہی کے وجودِ ’’زن‘‘ ہے تصویرِ بلاگنگ میں رنگ۔
3۔ خود کو قائد سمجھیں۔
قائدِ اعظم سمجھنا مشکل ہو تو قائدِ تحریک کی مثال بھی موجود ہے۔ ہر معاملے کی قیادت کرنے کی سرتوڑ کوشش کریں۔ جس تقریب یا معاملے میں قیادت نہ مل سکے، اسے ملک دشمن، دین بیزار، سامراجی ایجنڈا، صیہونی سازش اور بکواس قرار دیں۔ فاروق درویش بن جائیں۔ جس تقریب میں آپ کی خاطر خواہ پذیرائی نہ ہو اسے فلاپ قرار دیں۔ بہتر ہے کہ ایسی تقاریب ختم ہونے سے پانچ منٹ پہلے باہر نکل جائیں تاکہ بعد میں کہہ سکیں کہ میں تو احتجاجاً تقریب ہی ادھوری چھوڑ آیا تھا۔
4۔ ساتھ دیں اور چھوڑ دیں۔
جب کوئی نیا کام کرنے لگے تو آپ اس کے ساتھ کی ہامی بھریں۔ جب وہ آگے بڑھتا محسوس ہو تو ساتھ چھوڑ دیں اور اپنے چیلوں کے ذریعے اُس کی خوب ٹانگ کھینچیں۔ بات بے بات اعتراضات کریں۔ کسی کو کامیابی کی مبارک باد دینے کی مجبوری آن پڑے تو منفی پہلو کی وضاحت سے نہ چوکیں۔ اور کچھ نہ ملے تو یہی کہہ دیں کہ غیروں سے تعاون لینے کی بجائے آپ ہی سے رابطہ کرلیا گیا ہوتا۔ سامنے والے کا دامن صاف ہو تو اس کے ساتھ تعاون کرنے والوں میں نقص تلاش کریں۔ (’’ریما کے گھر کے پاس ایک شخص کو کتے نے کاٹ لیا‘‘ اور ’’عمران خان کے دوست کی اہلیہ کا نام پاناما لیکس میں آگیا‘‘ جیسی مثالیں پیشِ نظر رکھیں۔)
5۔ الزامات لگائیں۔
تمام بڑے لوگ الزامات لگاتے ہیں۔ یہ شہرت حاصل کرنے کا بہترین ذریعہ ہیں۔ آپ بھی الزامات لگائیں۔ مخالفین کو سرِ بازار ننگا کردیں۔ جب کچھ دنوں تک ماحول پُر امن محسوس ہو، کوئی شرلی چھوڑ دیں۔ کبھی ایسی کسی بات کا دعویٰ کردیں جو ہوئی ہی نہ ہو اور کبھی کسی وقوع پذیر بات سے مکر جائیں اور سامنے والے کو جھوٹا، مکار، فریبی اور خفیہ ایجنڈے پر کارفرما قرار دیں۔ دلائل نہ بھی ہوں تو ایسے نڈر بنے رہیں جیسے’ئل‘ کے بغیر لفظ ’دلائل‘۔ بس، الزامات لگائیں۔
6۔ الزامات واپس لے لیں۔
الزامات لگالیے؟ اب الزامات واپس لے لیں۔ جن الزامات میں آپ کے پاس دلائل ہوں، وہ الزامات تمام تر دلائل پیش کرنے کے بعد واپس لیں تاکہ مخالف اچھی طرح رسوا ہوجائے۔ جہاں آپ کے پاس دلائل اور ثبوت کی کمی ہو، وہاں اچھی طرح گند پھیلانے کے بعد اجتماعی مفادات کے پیشِ نظر الزامات واپس لے لیں تاکہ لوگوں کے دلوں میں شکوک و شبہات تو گھر کرجائیں۔ الزامات واپس لینے سے واضح ہوگا کہ آپ کتنے بڑے ’وہ‘ ہیں۔ ارے سینئر!
وقتاً فوقتاً لوگوں پر واضح کرتے رہیں کہ آپ اُردو بلاگنگ کے چاچے مامے نہیں ہیں، یہ کہنے سے لوگوں کے ذہن میں یہ خیال زور پکڑے گا کہ دراصل آپ ہی اُردو بلاگنگ کے چاچے مامے ہیں۔

فی الحال ان چھ مشوروں کو غنیمت جانیے۔ ہاں، بس یہ یاد رکھیے کہ وہ زمانے لد گئے جب سینئروں کی ہر بھلی بری بات اُن کی سنیارٹی کی بنیاد پر برداشت کرلی جاتی تھی۔ اب کی نسل منافق نہیں ہے، بڑی کھری ہے۔ اچھی بات پر ساتھ پائیں گے تو بری بات پر ایسا جواب پائیں گے کہ بتیاں سلگ جائیں گی۔

Monday, 14 December 2015

My Karachi - Intro

صوبۂ سندھ کا دارالحکومت، پاکستان کا سب سے بڑا اور زیادہ آبادی والا شہر، دنیا کے دس بڑے میٹروپولیٹن علاقوں میں سے ایک، آبادی کے لحاظ سے دنیا کے سرِ فہرست شہروں میں سے ایک، یہ ہے کراچی شہر!
By Nomi887 (Own work) [CC BY-SA 3.0], via Wikimedia Commons
کراچی کی آبادی دو کروڑ چالیس لاکھ سے تجاوز کرچکی ہے، یعنی بہت جلد کراچی شہر ڈھائی کروڑ انسانوں کا مسکن ہوگا۔ ترقی یافتہ، صنعتوں کا مرکز، بندرگاہ کا حامل اور نتیجتاً روزگار کی کثرت ہونے کے باعث یہاں شہرکاری (urbanization) کا عمل خاصا تیز رہا ہے۔ شہرکاری کے باعث وسائل محدود ہوتے چلے گئے اور مسائل بڑھتے چلے گئے۔ یہ صورتحال اب تک برقرار ہے اور آنے والے کئی سالوں تک اس میں بہتری کے امکانات نظر نہیں آتے۔ وجہ یہ ہے کہ ان مسائل سے نمٹنے کے لیے بروقت اقدامات نہیں کیے گئے اور یہ مسائل گمبھیر ہوتے چلے گئے، نیز اب تک متعلقہ حکام اور اداروں میں منصوبہ بندی اور ارادے کا فقدان نظر آتا ہے۔
گزشتہ چند مہینوں سے، کراچی کی سڑکوں پر سفر کے دوران میرے ذہن میں یہ خیال ضرور کلبلاتا ہے کہ جو مسائل نظر آرہے ہیں انھیں تحریر میں لاؤں۔ شکستہ حال سڑکیں، پانی یا صاف پانی کی عدم فراہمی، ذرائع نقل و حمل خصوصاً پبلک ٹرانسپورٹ کی حالتِ زار، اشیائے ضرورت کی دستیابی، بجلی اور گیس کی آنکھ مچولی، یہ تمام خالصتاً عام آدمی کے مسائل ہیں۔ ان بنیادی مسائل سے آگے بڑھیں تو فرقہ واریت، لسانیت، امن و امان سے متعلقہ مسائل بھی کراچی شہر میں موجود ہیں۔ تو سوال یہ ہے کہ اب تک ان مسائل کے حل کے لیے کیا گیا اور مستقبل میں کب اور کیسے بہتری کی گنجائش موجود ہے۔
سیاسی جماعتوں اور حکومتِ وقت کا کردار اگرچہ نظر انداز نہیں کیا جاسکتا، تاہم میرا مقصد الزام تراشی نہیں، اس لیے کوشش رہے گی کہ اس پہلو سے دور ہی رہوں اور اصل مدعا پیش کرنے پر توجہ مرکوز رکھوں۔
اس سلسلے کے تحت شائع ہونے والی تحاریر علمی یا تحقیقی نوعیت کی نہیں ہوں گی، بلکہ یہ کراچی کے ایک شہری کی حیثیت سے میرے مشاہدے اور خیالات کا بیان ہوگا۔

Monday, 12 October 2015

Abhijeet's Tere Bina

میٹرک کے دو سالوں میں غالباً مجھے دو ہی میوزک البموں کی کیسٹیں تحفے میں ملی تھیں۔ دونوں ہی کنول ناز نے دی تھیں۔ ایک عدنان سمیع کی ’تیرا چہرہ‘، اور دوسری ابھیجیت کی ’تیرے بنا‘۔ ٹیپ کیسیٹوں کا زمانہ اب تو بس رخصت ہی ہوچکا، لیکن اُن دِنوں ایسی صورتِ حال نہیں تھی۔ کیسیٹوں کا کاروبار اچھا خاصا ہوا کرتا تھا کیوں کہ کمپیوٹر، ایم پی تھری پلیئر، ٹیبلٹ اور اسمارٹ فون اتنے زیادہ عام نہیں ہوئے تھے۔
مجھے یاد نہیں کہ پہلے ’تیرا چہرہ‘ البم ملا تھا یا ’تیرے بنا‘؛ لیکن یہ ضرور یاد ہے کہ اُس وقت ان دونوں ہی البموں کو اتنا سنا تھا کہ ایک ایک گیت ہی نہیں، گیتوں کے درمیان موسیقی کا اُتار چڑھاؤ اور سارے سُر تک حفظ ہوگئے تھے۔ ابھیجیت بھٹاچاریا کی آواز میں اب نئے گیت تو خال خال ہی سننے کو آتے ہیں، اور نئی گلوکاروں کی آمد سے وہ گم نامی کے گوشوں میں گم ہوتے جا رہے ہیں، لیکن اُس وقت وہ خاصے مقبول تھے۔ ہر دوسری فلم میں اُن کی آواز میں کوئی نہ کوئی گیت ضرور شامل ہوتا تھا۔ شاہ رخ خان کی فلم ’یس باس‘ میں ’سنیے تو‘ اور ’میں کوئی ایسا گیت گاؤں‘، فلم ’بادشاہ‘ میں ’بادشاہ او بادشاہ‘، فلم ’میں ہوں نا‘ میں ’تمھیں جو میں نے دیکھا‘، فلم ’چلتے چلتے‘ میں ’سنو نا سنونا سن لو نا‘، ’چلتے چلتے‘ اور ’توبہ تمھارے یہ اشارے‘، سنیل سیٹھی کی فلم ’دھڑکن‘ میں ’تم دل کی دھڑکن میں‘، ڈینوموریا کی فلم ’راز‘ میں ’پیار سے پیار ہم‘، فلم بوبی دیول کی فلم ’ترکیب‘ میں ’تیرا غصہ‘، اکشے کمار اور انیل کپور کی فلم ’بے وفا‘ میں ’عشق چھپتا نہیں چھپانے سے‘ وغیرہ، ابھیجیت کے مشہور و معروف گیتوں میں سے چند ہیں۔ ابھیجیت اپنی منفرد آواز کی وجہ سے الگ ہی پہچانے جاتے ہیں اور مجھے اسی لیے ’بطور گلوکار‘ وہ پسند رہے ہیں۔ ’بطور گلوکار‘ کی تخصیص اس لیے کہ موصوف اکثر اوقات پاکستان اور پاکستانیوں کے بارے میں انتہائی متنازعہ رائے کا برملا اظہار کرتے ہیں، اور پاکستانی گلوکاروں کی بھارت آمد کو سخت ناپسند کرتے ہیں۔ شاید اپنی قدر گھٹ جانے کا نتیجہ ہے۔
بہرحال، ابھیجیت کا میوزک البم ’تیرے بنا‘ ۲۰۰۳ میں جاری ہوا تھا۔ البم میں درج ذیل آٹھ گیت شامل تھے:
  1. کبھی یادوں میں آؤں
  2. دھیرے دھیرے دھیرے
  3. چلنے لگی ہیں ہوائیں
  4. کچھ تو کہو
  5. کبھی موسم
  6. نیندوں میں خوابوں کا سلسلہ
  7. مجھے کنہیا کہا کرو
  8. ہوگیا ہوگیا
البم کے تمام آٹھ گیتوں کو الفاظ کا جامہ نصرت بدر نے پہنایا جب کہ موسیقی سپتریشی ابھیجیت نے ترتیب دی۔ ۲۰۰۴ سے لے کر اب تک، میں نے اس البم کو نجانے کتنی ہی بار سنا ہے اور لطف اُٹھایا ہے۔ البم کا ہر گیت دیگر پاپ البموں سے الگ ہے۔ ہر گانا محبت کے احساس سے سرشار، دل لبھانے والا اور محبت کی وادی میں لے جانے والا ہے۔
مثلاً
کبھی یادوں میں آؤں، کبھی خوابوں میں آؤں
تیری پلکوں کے سائے میں آکر جھلملاؤں
میں وہ خوشبو نہیں جو ہوا میں کھو جاؤں
ہوا بھی چل رہی ہے، مگر تُو ہی نہیں ہے
فضا رنگیں وہی ہے، کہانی کہہ رہی ہے
مجھے جتنا بھلاؤ، میں اُتنا یاد آؤں!

جو تم نہ ملتیں، ہوتا ہی کیا بھول جانے کو
جو تم نہ ہوتیں، ہوتا ہی کیا ہار جانے کو
میری امانت تھیں تم، میری محبت ہو تم
تمھیں کیسے میں بھلاؤں!

یا پھر، محبوب کی یاد میں

چلنے لگی ہیں ہوائیں
ساگر بھی لہرائے
پل پل دل میرا ترسے
پل پل تم یاد آئے

اسی طرح ’کبھی موسم‘ بھی کہ

یہ پنگھٹ سونے سونے ہیں
وہ خالی خالی جھولے ہیں
لہراتا ساگر کنارا تم بن ادھورا لگے
لہر قدموں سے ٹکرائی
مجھے تم یاد آئے
کبھی موسم ہوا ریشم
کبھی بارش ہوئی رم جھم
مجھے تم یاد آئے

البم کے سبھی گیت بہت ہلکے پھلکے اور لطف دینے والے ہیں۔ شاعری میں کوئی عظیم الشان فلسفہ نہیں ہے، موسیقی میں کوئی عالی شان کمال نہیں دکھایا گیا ہے، گائیکی میں کوئی آسمان کو چھولینے والے سُر نہیں ہیں، لیکن ان میں محبت ہے۔ محبت کرنے والے ایک عام شخص کی کیفیات ہیں، حالِ دل کا بیاں ہے۔
مجھے یاد ہے کہ البم سننے کے ابتدائی دِنوں سے مجھے اس کا ایک گیت خاص کر پسند رہا، ’نیندوں میں خوابوں کا سلسلہ‘۔

ملے جب سے تم سے، خود سے جدا ہوگئے
خدا کی قسم تم پہ فدا ہوگئے
جاگی جاگی آنکھوں نے دیکھے خواب تمھارے ہیں
دیوانے تمھارے ہوئے جب سے ہیں ہم
سبھی یار ہم سے دیکھو خفا ہوگئے
خدا کی قسم تم پہ فدا ہوگئے
نیندوں میں خوابوں کا سلسلہ!
خوابوں میں یادوں کا سلسلہ!

کبھی میں سوچتا ہوں کہ ہوسکتا ہے اس البم میں ایسی کوئی خاص بات نہ ہو، اور ہوسکتا ہے کہ مجھے یہ البم صرف اس لیے پسند ہو کہ عمر کے ایک خاص حصے میں، ایک خاص شخص کی جانب سے، ایک خاص کیفیت میں دیا گیا تحفہ تھا اور اُس کیفیت میں سنتے ہوئے مجھے اچھا لگنے کے باعث اب تک اچھا لگتا ہو، اور ہوسکتا ہے کہ دوسروں کو کچھ خاص نہ لگے، لیکن پسند اپنی اپنی!

Tuesday, 25 August 2015

Men's Role in Housekeeping

اکثر مشرقی ثقافتوں میں کچھ کام عورتوں کے ساتھ ایسے مخصوص ہیں کہ مردوں کا وہ کام کرنا معیوب تصور کیا جاتا ہے۔ ان کاموں میں گھریلو نوعیت کے کام قابلِ ذکر ہیں، مثلاً: باورچی خانے کے کام، گھر کی صفائی، کپڑوں کی دُھلائی، وغیرہ۔ ان کاموں کے معیوب ہونے کا تصور، ہوسکتا ہے کہ کسی زمانے میں مردوں کا تخلیق کردہ ہو لیکن موجودہ دور میں ان تصورات کی پاس دار خواتین ہیں۔ سلیقہ شعاری اور سگھڑاپے کے نام پر لڑکیوں کے ذہنوں میں شروع سے یہ راسخ کرنے کی کوشش کی جاتی ہے کہ یہ گھریلو نوعیت کے کام اُن کی ذمہ داری اور فریضہ ہیں، چناں چہ اُنھیں گھر کے مردوں (باپ اور بھائیوں) کی خدمت کرنی چاہیے اور اُنھیں گھر کے ایسے کام کرنے نہیں دینے چاہئیں۔ یہ تصورات گھر میں بہو آنے کے بعد زیادہ زور پکڑ جاتے ہیں اور اگر لڑکا ایسے کسی کام میں اپنی بیگم کا ہاتھ بٹانے لگے تو عورت اچانک ساس کا روپ دھار لیتی ہے اور بہو پر طنز کے تیروں کی برسات ہوتی ہے کہ ہم نے تو کبھی اپنے بیٹے سے ایسے کام نہیں کروائے، ہمارے ہاں لڑکے یہ کام نہیں کرتے، وغیرہ وغیرہ۔ یوں ہی اگر کسی مرد کے بارے میں خبر ملے کہ وہ گھر بھر کے کپڑے دھوتا ہے یا کسی دوسرے کام میں اپنی بیگم کا ہاتھ بٹاتا ہے تو بھی اسی طرح کی باتیں بنائی جاتی ہیں کہ نجانے کس قسم کی عورتیں ہوتی ہیں جو اپنے شوہروں سے ایسے کام کرواتی ہیں، اور الا بلا۔
ایک طرف عورت کا اپنی ہم صنف کے بارے میں یہ رویہ اور دوسری طرف صنفِ مخالف یعنی مرد کی یہ سوچ کہ اصل کام یعنی محنت مزدوری اور کمائی تو ہم کرتے ہیں، سارا دن گھر میں رہنے والی عورت کے پاس کام ہی کیا ہے۔چناں چہ گھر لوٹنے پر وہ یہ چاہتے ہیں کہ بیگم اُن کی خدمت میں جت جائے اور اُف تک نہ کرے۔
اس کے برعکس وہ معاشرے ہیں جہاں صرف شوہر اور بیوی ہی نہیں، اولاد بھی گھر کے ہر کام میں حصہ دار ہے۔ شوہر کماتا ہے تو بیوی بھی کماتی ہے، اس لیے کوئی دوسرے کو یہ طعنہ نہیں دے سکتا کہ اصل کام (کمائی) تو وہ کر رہا ہے۔ نتیجتاً گھر کے کاموں میں بھی دونوں ہی کو برابر حصہ ڈالنا پڑتا ہے۔ ساتھ ہی اولاد کو بھی، چاہے وہ لڑکا ہو یا لڑکی، شروع ہی سے گھر کے کام سونپے جاتے ہیں، کسی بچّے کے ذمے دوپہر کا کھانا، کسی کے ذمے صبح کا ناشتہ، کسی کے ذمے چھوٹے بہن بھائی کو تیار کرنا، وغیرہ، یوں کسی کے بھی ذہن میں برتری کے جذبات پیدا ہونے کا سدِّباب کرلیا جاتا ہے۔
جس طرح گھر کی دوسری ذمہ داریوں میں مرد اور عورت برابر کے حصہ دار ہیں، اُسی طرح اولاد کی پرورش کا معاملہ بھی ہے۔ صرف کماکر دینے سے باپ کے فرائض پورے نہیں ہو جاتے؛ اولاد کی تعلیم و تربیت، تفریح اور کھیل کود، اور زندگی کے ہر پہلو کی مناسبت سے ماں اور باپ، دونوں ہی پر کچھ ذمہ داریاں عائد ہوتی ہیں۔ باپ صرف اس لیے نہیں ہوتا کہ اولاد کی روزمرہ ضروریات پوری کرنے کے عوض ولدیت کے خانے میں اُس کا نام لکھ دیا جائے۔
گزشتہ ہفتے کے اختتام پر، امریکی عمرانی انجمن (امیریکن سوشیولوجیکل ایوسی ایشن) کے سالانہ اجلاس میں جورجیا اسٹیٹ یونیورسٹی نے ایک تحقیق پیش کی ہے کہ مل جل کر اپنی اولاد کی پرورش کرنے والے ازدواجی جوڑوں کے تعلقات اور جنسی زندگی زیادہ بہتر ہوتی ہے۔ نو سو (۹۰۰) سے زائد شادی شدہ جوڑوں کی معلومات پر تحقیق سے حاصل ہونے والے نتائج کے مطابق بچّوں کی پرورش اور نگہداشت کی ذمہ داریاں بانٹنے سے جوڑے خوش رہتے ہیں، اور والدین جنسی اور جذباتی طور پر زیادہ اطمینان محسوس کرتے ہیں؛ جب کہ جہاں عورتیں بچّوں کی نگہداشت میں زیادہ حصہ ڈالتی ہیں، وہاں مرد اور عورت دونوں ہی کم مطمئن نظر آئے۔
تحقیق اگرچہ صرف اولاد کی نگہداشت کے حوالے سے مرد و عورت کی ذمہ داریوں سے متعلق ہے، تاہم میرا ماننا یہ ہے کہ ازدواجی تعلقات میں بہتری کے لیے صرف اولاد کی ذمہ داریاں نہیں، بلکہ دوسرے معاملات میں بھی مل جل کر کام کرنے اور ایک دوسرے کا ہاتھ بٹانے سے معاملات خاصے بہتر رہتے ہیں۔ اگر مرد اپنی ہفتہ وار چھٹی کے دن صرف یہ سوچ کر، کہ عورت کو گھریلو کاموں سے کسی بھی دن چھٹی نہیں ملتی، گھر کے کاموں میں عورت کا ساتھ دینے لگے تو دونوں کے تعلقات میں خاصی خوش گوار بہتری آسکتی ہے۔ ایک طرف عورت کو یہ احساس ہوگا کہ شوہر کو اُس کا خیال ہے تو دوسری طرف مرد کو بھی یاد رہے گا کہ گھر کے کام معمولی نہیں ہوتے، اچھا خاصا تھکا دینے اور کبھی ختم نہ ہونے والے ہوتے ہیں۔
بچّے پالنے کا تجربہ رکھنے والے بخوبی جانتے ہوں گے کہ یہ کام کس قدر مشکل ہے۔ بچّے خواہ جتنے چھوٹے ہوں، سمجھ بوجھ رکھتے ہیں اور آپ کو تگنی کا ناچ نچا سکتے ہیں۔ بچّوں کی ضد سے متعلق ایک دلچسپ لطیفہ ہے کہ اکبر بادشاہ کے دربار میں اسی موضوع سے متعلق ایک بار گفتگو ہو رہی تھی۔ اکبر بادشاہ نے کہا کہ بچّوں کو پالنا ایسا کون سا مشکل کام ہے۔ ملّا دو پیازہ نے کہا، ٹھیک ہے حضور، کچھ وقت کے لیے میں بچّہ بن جاتا ہوں اور آپ میرے باپ بن کر مجھے بہلائیں۔ بادشاہ تیار ہوگیا۔ ملّا دو پیازہ نے فوراً رونا شروع کردیا۔ بادشاہ نے پوچھا، کیا چاہیے؟ کہنے لگے، اونٹ چاہیے۔ بادشاہ نے اونٹ منگوا دیا۔ اونٹ آیا تو ملّا دوبارہ رونے لگے۔ بادشاہ نے دریافت کیا، کیا چاہیے؟ بولے، سوئی چاہیے۔ لیجیے جناب، حکم پر سوئی بھی حاضر کر دی گئی۔ اب تو ملّا مزید مچل مچل کر رونے لگے۔ بادشاہ نے خواہش پوچھی تو بولے، اونٹ کو سوئی کے ناکے سے گزارو۔ بادشاہ نے بہت سمجھایا کہ سوراخ بہت چھوٹا ہے اور اونٹ اتنا بڑا، اس میں سے کیسے گزرے گا، لیکن ملّا مان کر نہ دیے۔ آخر بادشاہ کو ہار ماننی پڑی۔
تو، جب مرد دن بھر گھر سے باہر رہتے ہیں تو شام میں واپس آکر وہ یہ سمجھتے ہیں کہ بچّے کے ساتھ کچھ باتیں کرلیں، کھیل لیے تو کافی ہے۔ بچّہ دن بھر کیا کرتا رہا ہے، اگر پڑھ رہا ہے تو پڑھائی میں کیسا ہے، زندگی میں کن مسائل کا سامنا کر رہا ہے، کوئی پروا نہیں۔ اور بچّہ ابھی ننھا ہو، رات میں تنگ کرتا ہو تو بھڑک جاتے ہیں۔ اپنی نیند اور آرام زیادہ عزیز رکھتے ہیں، غصّے میں چیختے چلّاتے ہیں، اور اگر زیادہ شرافت دکھائیں تو تکیہ چادر اُٹھاکر دوسرے کمرے کا رُخ کرتے ہیں۔ پھر بچّہ اپنی ماں کو جب تک ستائے جائے، جگائے جائے۔ ہاں، یہ توقع ضرور ہوتی ہے کہ بچّے کی ماں اگلے دن صبح صبح ان کی خدمت کے لیے تیار ہو اور ناشتہ بناکر دے سکے۔
ایسے میں بچّے کی ماں، جو دن بھر اُس کی دیکھ بھال کرکے تھک چکی ہوتی ہے، رات میں بچّے کے تنگ کرنے پر کبھی کبھی خود بھی قابو نہیں رکھ پاتی۔ بچّے کو ایک تھپڑ پڑتا ہے، پھر بچّہ بلک بلک کر روتا ہے، اور ماں سسک سسک کر۔
اللہ کا شکر ہے کہ حفصہ (میری بیٹی) رات میں زیادہ تنگ نہیں کرتی، لیکن کبھی اُس نے تنگ کیا بھی تو میں نے تھکن اور نیند سے چور ہونے کے باوجود کمرے سے باہر چلے جانا اولاد سے اپنی محبت کی توہین سمجھا۔ کئی بار ایسا ہوا کہ عروسہ (اہلیہ) کی تھکن دیکھ کر میں نے اُسے سونے کا کہہ دیا اور خود حفصہ کو بہلاتا رہا۔ گھر میں دن بھر بچّے کی دیکھ بھال کرنے سے زیادہ تھکانے والا شاید کوئی کام نہیں، جسمانی اور ذہنی، ہر دو طرح کی تھکن ہوجاتی ہے۔ ایسے میں بچّہ اگر رات میں بھی ستانے لگے تو صبر کا پیمانہ لبریز ہوتے دیر نہیں لگتی۔ ایسے میں آپ کو کسی ساتھی کی ضرورت ہوتی ہے؛ اور شوہر سے بہتر ساتھی کون۔
صرف اولاد کی پرورش ہی نہیں، گھر کے دیگر کاموں میں بھی میری کوشش ہوتی ہے کہ ممکن حد تک ہاتھ بٹاسکوں، خواہ دل چاہے یا نہ چاہے۔ عروسہ کی بیماری یا تھکن کی حالت میں، میں نے کپڑے دھونے، برتن دھونے، کھانا تیار کرنے، کپڑے استری کرنے میں کبھی کوئی عار محسوس نہیں کیا۔ یہ سب کام جتنے ایک عورت کے ہیں، اُتنے ہی مرد کے بھی ہیں۔ حقیقتاً ذمہ داری تو مرد ہی کی ہیں۔ کوشش کرتا ہوں کہ ایک اچھا شوہر اور ایک اچھا باپ بن سکوں۔
تحریر کا آغاز گھریلو ذمہ داریاں خواتین تک محدود رکھنے کے تصور سے کیا تھا، اختتام اس تصور کے خاتمے کے لیے اپنی معمولی کوششوں کے تذکرے پر۔

Being a Parent...

مجھے اپنی اولاد سے بے حد محبت ہے۔
یقیناً سبھی والدین کو ہوتی ہے۔
لیکن مجھے ایسا محسوس ہوتا ہے کہ اب کے والدین اپنی اولاد سے زیادہ محبت کرتے ہیں۔ نجانے کیوں! کیا اس لیے کہ اب والدین اور اولاد کے درمیان تعلق کی نوعیت خاصی تبدیل ہوگئی ہے اور اُس میں دوستی کا عنصر زیادہ شامل ہوگیا ہے، یا واقعی نئی نسل کو اپنی اولاد سے محبت زیادہ ہے۔
ہمارے والدین بننے سے پہلے جو والدین تھے/ہیں، اُن کا اپنی اولاد سے تعلق محبت کے ساتھ ساتھ رعب اور دبدبے کا بھی تھا۔ اُس میں رکھ رکھاؤ تھا، فاصلہ تھا۔ بے تکلفی نہیں تھی۔ اب اس میں نمایاں تبدیلی آئی ہے۔
والدین اور اولاد کے حوالے سے ایک اور نمایاں تبدیلی بھی مجھے محسوس ہوتی ہے۔ مجھے ایسا لگتا ہے کہ اب باپ اپنی اولاد سے زیادہ قریب ہوگئے ہیں۔ اُن سے زیادہ محبت کرنے لگے ہیں۔ اُن کی زیادہ فکر کرتے ہیں۔ اُنھیں زیادہ وقت دینا چاہتے ہیں۔
ایسا نہیں ہے کہ میں باپ بننے کے بعد اپنی اولاد کے لیے جو محبت محسوس کر رہا ہوں، اُس کے آگے مجھے اپنے والدین کی محبت اور توجہ کم لگ رہی ہے۔ میں نے کئی رشتے دار اور جان پہچان والے باپوں کے رویوں کا مشاہدہ کیا ہے۔ یہاں تک کہ میں نے نوجوان ماؤں کو طنزاً اپنے شوہروں سے یہ کہتے ہوئے بھی سنا ہے کہ آپ کو ماں سے زیادہ اولاد کی مامتا ہے۔
کیا واقعی ایسا ہے؟